یہ اب ہماری ضد ہے

یہ اب ہماری ضد ہے،شہبازشریف کے نوازشریف کی جگہ مسلم لیگ ن کا صدر بننے کے بعد مریم نواز پھر سرگرم، دوٹوک اعلان کردیایہ اب ہماری ضد ہے،شہبازشریف کے نوازشریف کی جگہ مسلم لیگ ن کا صدر بننے کے بعد مریم نواز پھر سرگرم، دوٹوک اعلان کردیا
لاہور ( این این ائی) مسلم لیگ (ن) کی مرکزی رہنما مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف عشق بھی ہے اور اب ضد بھی ہے ۔انہوں نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر نواز شریف اور شہباز شریف کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ ہم ایک ہیں ، ہم اکٹھے ہیں ، مسلم لیگ (ن) متحد ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہمارے سب کے دلوں کی دھڑکن نواز شریف ہیں اور مسلم لیگ (ن) نے یہ الفاظ آج سچ کر دکھائے ۔

قبل ازیں پاکستان مسلم لیگ (ن) کی مرکزی مجلس عاملہ نے سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف کو پارٹی کا تاحیات قائد جبکہ وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کو قائمقام مرکزی صدر منتخب کر لیا ، 6مارچ کو کنونشن سنٹر اسلام آباد میں منعقد ہونے والے جنرل کونسل کے اجلاس میں پارٹی کے مستقل صدر کے انتخاب کا مرحلہ مکمل کیا جائے گا ۔ مسلم لیگ (ن) کی مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس چیئرمین راجہ ظفر الحق کی صدارت میں 180ایچ ماڈل ٹاؤن میں منعقد ہوا ۔مسلم لیگ (ن) کی مرکزی عاملہ کے اجلاس میں نواز شریف کو تاحیات قائد منتخب کئے جانے کے موقع پر رہنماوزیراعظم نواز شریف کے نعرے لگاتے رہے ۔ مرکزی مجلس عاملہ کے اجلاس میں مسلم لیگ (ن) کے چیئرمین راجہ ظفر الحق نے قرارداد پیش کی جس کے متن میں کہا گیا کہ مرکزی مجلس عاملہ کا یہ اجلاس اس عزم کا اظہار کرتا ہے کہ قائد جمہوریت محمد نواز شریف ہمارے قائد تھے، ہیں اور رہیں گے ۔ جس پر شرکاء نے کھڑے ہو کر اوربھرپور تالیاں بجا کر اس کی توثیق اور تائید کی اور اس موقع پر وزیر اعظم نواز شریف کے نعرے بھی لگائے ۔وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور وزیر اعلیٰ محمد شہباز شریف نے اس قرارداد کی تائید کی۔اجلاس میں سابق وزیرا عظم محمد نواز شریف ،وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی ، وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف ، اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق ، ڈپٹی اسپیکر مرتضیٰ جاوید عباسی ،وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال ، وفاقی وزیر ریلوے سعد رفیق ، وزیر اعظم آزاد جموں کشمیر راجہ فاروق حیدر ، گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ ، گورنر سندھ محمد زبیر ،سردار مہتاب خان ،

امیر مقام ، مریم نواز ، پرویز رشید ، حمزہ شہباز ، اقبال ظفر جھگڑا ،نواب ثناء اللہ زہری ، سردار یعقوب ناصر ، طارق فضل چوہدری ، عبدالقادر بلوچ ، دانیال عزیز ،سائرہ افضل تارڑ ، طارق فاطمی ، برجیس طاہر ، کامران مائیکل ، جعفر اقبال ، آصف کرمانی ، مصدق ملک ،راجہ اشفاق سرور ، ذکیہ شاہنواز ، سعود مجید ، پیر صابر شاہ ، رانا ثناء اللہ رانا شمیم ، محسن رانجھا ، سینیٹر سلیم ضیاء ، زبیر گل ، شیخ آفتاب سمیت دیگر ممبران موجود تھے ۔اجلاس کے دوران سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف نے وزیر اعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی بطور قائمقام مرکزی صدر نامزدگی کی تجویز پیش کی جس کی مرکزی مجلس عاملہ نے توثیق اور تائید کی جس کے بعد شہباز شریف کو پارٹی کا قائمقام مرکزی صدر منتخب کر لیا گیا ۔

شہباز شریف نے پارٹی رہنماؤں کی جانب سے اعتماد کرنے پر ان کا شکریہ ادا کیا ۔ بعد ازاں مسلم لیگ (ن) کے چیئرمین راجہ ظفر الحق نے قرارداد پیش کی جس کے متن میں کہا گیا کہ مرکزی مجلس عاملہ کا یہ اجلاس اس عزم کا اظہار کرتا ہے کہ قائد جمہوریت محمد نواز شریف ہمارے قائد تھے، ہیں اور رہیں گے ۔ جس پر شرکاء نے کھڑے ہو کر اوربھرپور تالیاں بجا کر اس کی توثیق اور تائید کی ۔وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور وزیر اعلیٰ شہباز شریف نے اس قرارداد کی تائید کی ۔ اس منظوری کے بعد نواز شریف کو پارٹی کا تاحیات قائد منتخب کر لیا گیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے