کہاں سے گرفتار کیا جائے گا

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) احتساب عدالت میں ایون فیلڈ ریفرنس کیس کا فیصلہ سنادیا گیا ہے فیصلے کے تحت سابق وزیرا عظم نواز شریف کو 10 سال ، ان کی صاحبزادی مریم نواز کو 7 سال اور داماد کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی گئی۔ نواز شریف پر10 ملین پاؤنڈ اور مریم نواز پر 2 ملین پاؤنڈ کا جُرمانہ بھی عائد کیا گیا۔ نواز شریف اور مریم نواز

لندن میں موجود ہیں جبکہ کیپٹن (ر) صفدر اس وقت مانسہرہ میں اپنی انتخابی مہم چلا رہے ہیں ۔ احتساب عدالت سے سزا ہونے کے بعد پولیس کی ایک خصوصی ٹیم کیپٹن (ر) صفدر کو گرفتار کرنے کے لیے مانسہرہ روانہ ہو گئی ہے۔ خیال رہے کہ احتساب عدالت نے آج ایون فیلڈ ریفرنس کیس کا فیصلہ سنا دیا ۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق احتساب عدالت کے بند کمرے میں جج محمد بشیر نے ملزمان کے وکلا کو روسٹرم پر بُلا کر ایون فیلڈ ریفرنس کیس کا فیصلہ سنایا۔احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس کیس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کو 10 سال قید کی سزا اور مریم نواز کو 7 سال قید کی سزا سنا دی گئی جبکہ کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی گئی۔ عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس کیس میں سزا کے ساتھ ساتھ نواز شریف پر 8 ملین پاؤنڈ جُرمانہ اور مریم نواز شریف پر 2 ملین پاؤنڈ جُرمانہ بھی عائد کیا۔ عدالت نے جائیدادضبط کرنے اور اسے فروخت کر کے رقم قومی خزانے میں جمع کروانے کا حکم بھی دیا۔ سیاسی تجزیہ کاروں کے مطابق کیپٹن (ر) صفدر کو ملک میں ہی موجود ہونے پر گرفتار کر لیا جائے گا جبکہ نواز شریف اور مریم نواز کو وطن واپسی پر

نیب کی ٹیم کی جانب سے ائیر پورٹ پر ہی دھر لیے جانے کا امکان ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق احتساب عدالت کے فیصلے کے بعد لیگی کارکنان نے شدید نعرے بازی بھی کی ، مظاہرین کا کہن اہے کہ یہ فیصلہ ہرگز قبول نہیں ہے، جس قسم کے بھی حالات ہوں گے نواز شریف کے ساتھ رہیں گے کیونکہ عوامی فیصلہ 25 جولائی کو ہی ہو گا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے