پولیس افسران کی تنخوا ہیں بند کرنے کا حکم

پولیس افسران کی تنخوا ہیں بند کرنے کا حکم

لاہور(ویب ڈیسک)ماڈل ٹاؤن کچہری کے جوڈیشل مجسٹریٹ محمداسد نے قبضہ مافیا کی پشت پناہی کرنے کے الزام میں ایس پی انویسٹی گیشن ماڈل ٹاؤن، ایس پی آپریشنز ماڈل ٹاؤن، ڈی ایس پی ماڈل ٹاؤن سرکل، ایس ڈی پی او ماڈل ٹاؤن اور4انسپکٹرز کے خلاف دائر استغاثہ میں عدالتی حکم کے باجود پیش

نہ ہونے پر ان افسران کی تنخوا ہیں بند کرنے کا حکم دے دیا ہے ، عدالت نے سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ اسلام آباد،سی سی پی او لاہور، آر پی او گجرانوالہ اور ایس پی انویسٹی گیشن کو مراسلہ بھی بھجوا دیاہے۔جوڈیشل مجسٹریٹ نے دائر استغاثہ میں عدالتی حکم کے باوجود پیش نہ ہونے پرپولیس افسران ،ایس پی انویسٹی گیشن ماڈل ٹاؤن عبدالرب،ایس پی آپریشنز ماڈل ٹاؤن ڈاکٹرراجہ عابد، ڈی ایس پی ماڈل ٹاؤن سرکل ناصر محمود باجوہ،ایس ڈی پی اوماڈل ٹاؤن سرکل راشد سندھو، ایس ایچ او ماڈل ٹاؤن طاہر اکرام،جاوید گجر،انسپکٹر ماڈل ٹاؤن اظہر ثاقب اور سب انسپکٹر سرور کی تنخوا ہ بند کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں، درخواست گزار جاوید اقبال بٹ نے پولیس افسران کے خلاف استغاثہ دائر کر رکھا ہے جس میں اس نے اپنے وکیل محمد شہزاد کاکڑ کی وساطت سے موقف اختیار کررکھا ہے کہ مذکورہ پولیس افسران مبینہ طور پرماڈل ٹاؤن میں واقع درخواست گزار کے پلاٹ پر قبضہ کرنے والے قبضہ مافیا کی پشت پناہی میں ملوث ہیں، پولیس افسران کو قبضہ مافیا کے خلاف درخواست بھی دی گئی مگر پولیس افسران نے قبضہ مافیا کے خلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کی گئی،پولیس افسران نے قبضہ مافیا کہ ساتھ مل کر پلاٹ پر قبضہ کروانے کی کوشش کی جس کے بعد عدالتی حکم پر پولیس نے قبضہ مافیا کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا پولیس افسران اس مقدمہ میں ملزم ہیں ،عدالت کی جانب سے پولیس افسران کو طلب بھی کیا جا چکا ہے، عدالت نے دلائل سننے کے بعد مذکورہ بالاپولیس افسروں کی تنخواہیں بند کرنے کے احکامات جاری کرتے ہوئے سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ اسلام آباد،سی سی پی او لاہور، آر پی او گجرانوالہ اور ایس پی انویسٹی گیشن کو مراسلہ جاری کر دیا ہے۔

You May Also Like

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے