لاہور سے ایک اور شرمناک سکینڈل کی بازگشت سنائی دینے لگی

لاہور(ویب ڈیسک) نکاح پر نکاح کرکے بچوں کی سمگلنگ میں ملوث ٹولہ منظر عام پر آگیا، محکمہ بلدیات پنجاب نے جعلی نکاح نامے بنانیوالے ٹولے کے خلاف لاہور میں مقدمہ درج کرایا، محکمہ بلدیات نے اینٹی کرپشن کو 2 یونین کونسل سیکرٹریوں سمیت 6 ملزموں کے خلاف جوڈیشل ایکشن منظور کرنے

کی استدعا بھی کی ہے۔ محکمے نے یونین کونسل چا ہ میراں کے سیکرٹری عمران بٹ کے خلاف فوری کارروائی کا حکم دیا ہے، سیکرٹری یوسی فاروق گنج غلام سجاد بھی قانون کی زد میں آگئے ہیں، انکوائری میں نکاح خواں حافظ محمد امیر خاں ، معراج الحق سمیت 6 افراد پر جعلسازی ثابت ہوگئی ، محکمہ بلدیات کی استدعا پر اینٹی کرپشن نے ڈی ایچ اے کے رہائشی عبدالرؤف پر مقدمہ درج کیا ہے، ملزمان نے درخواست گزار کی بیٹی کو جعلسازی سے سپین سمگل کرنے کی کوشش کی ہے۔ اینٹی کرپشن نے خطرناک گروہ کی گرفتاری کے لیے کارروائی شروع کردی ۔ حبیب اللہ روڈ کے رہائشی معراج الحق نے یونین کونسل 26 کے سیکرٹری عمران بٹ اور نکاح خواں حافظ محمد امیر خان سے ملکر دو جعلی نکاح نامے تیار کرائے ہیں ۔ معراج حق نے اپنی بیٹی اور بیوی کے ساتھ مل کر معصوم شہری کو لوٹنے اور شہری کی بیٹی کو کسی اور کانام دے کر

دوسرے ملک سمگل کرنے کی کوشش کی ہے۔ دونوں نکاح نامے 2016 میں بنائے گئے ہیں ، ایک نکاح کی تاریخ 2009 جبکہ ایک نکاح کی تاریخ 2009 جبکہ دوسرا 2016 میں درج ہے، دونوں نکاح ناموں میں لڑکی کو کنواری لکھا گیا ہے۔ درخواست گزار کے مطابق اس کی سابق بیوی کا نکاح لقمان نامی شخص سے ہوا جس کو میری بیٹی کا باپ بنا کر دوسرے ملک سمگل کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ ڈپٹی ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ افضال ریحان نے انکوائری میں سیکرٹروں سمیت رجسٹرار کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ محکمہ بلدیات نے واقعہ سامنے آنے کے بعد تمام کونسلوں کے سیکرٹروں کو طلب کرتے ہوئے رجسٹروں کا آڈٹ کرانے کے احکامات جاری کئےہیں ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے